20

شبلی فراز نے عوام سے کہا کہ وہ قیمتوں میں اضافے سے بچنے کے لیے کم سے کم ایندھن استعمال کریں۔

  • وزیر کا کہنا ہے کہ اگر پاکستان اپنا پیٹرول خود بناتا یا ملک کے پاس تیل کے کنویں ہوتے تو یہ معاملہ مختلف ہوتا۔
  • “بین الاقوامی مارکیٹ میں ایندھن کی قیمتیں 95 ڈالر تک پہنچ گئی ہیں،” وہ کہتے ہیں کہ حکومت نے ایندھن کی قیمتوں پر ٹیکس نہیں لگایا ہے۔
  • وزارت سائنس کا کہنا ہے کہ بجلی کی کھپت کو کم کرنے کی کوشش کر رہی ہے کیونکہ “اس سے حکومت کو تیل کی درآمد کو کم سے کم کرنے کی اجازت ملے گی۔”

اسلام آباد: ملک میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے بعد وفاقی وزیر برائے سائنس و ٹیکنالوجی شبلی فراز نے بدھ کے روز عوام کو مشورہ دیا ہے کہ ’ممکنہ حد تک کم ایندھن استعمال کریں‘۔ جیو نیوز اطلاع دی

پارلیمنٹ ہاؤس میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے وزیر نے کہا کہ اگر پاکستان اپنا پیٹرول خود بناتا یا ملک کے پاس تیل کے کنویں ہوتے تو یہ معاملہ مختلف ہوتا۔

“بین الاقوامی مارکیٹ میں ایندھن کی قیمتیں $95 تک پہنچ گئی ہیں،” انہوں نے کہا کہ حکومت نے عوام کو “ریلیف” دینے کے لیے ایندھن کی قیمتوں پر ٹیکس نہیں لگایا ہے۔

فراز نے یہ بھی کہا کہ “ان مشکل اوقات میں زندگی معمول پر نہیں آسکتی کیونکہ مہنگائی اور COVID-19 عالمی مسائل ہیں۔”

انہوں نے مزید کہا کہ ہماری حکومت کی ترجیح کھانے پینے کی اشیاء پر سبسڈی دینا ہے۔

گفتگو کے دوران، انہوں نے کہا کہ وزارت سائنس بجلی کی کھپت کو کم کرنے کی کوشش کر رہی ہے، کیونکہ “یہ حکومت کو تیل کی درآمد کو کم سے کم کرنے کی اجازت دے گی۔”

قیمت میں اضافہ

حکومت نے منگل کو بین الاقوامی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمتوں میں اضافے کا حوالہ دیتے ہوئے پیٹرول کی قیمت میں 12.03 روپے فی لیٹر اضافہ کرکے عوام پر بڑا بم گرایا۔

بین الاقوامی مارکیٹ میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں زبردست اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے اور اس وقت یہ 2014 کے بعد کی بلند ترین سطح پر ہیں۔ سال کے آغاز سے مسلسل اضافے کے باوجود وزیراعظم عمران خان نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا آخری جائزہ موخر کردیا۔ 31 جنوری 2022، اور اوگرا کی سمری کے خلاف مشورہ دیا،” فنانس ڈویژن نے تازہ ترین بیان میں کہا۔


– تھمب نیل تصویر: PID/فائل

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں