13

بلاول نے گیلانی کا استعفیٰ قبول کرنے سے انکار کردیا۔

پیپلز پارٹی کے رہنما یوسف رضا گیلانی اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری۔  — اے ایف پی/فائل
پیپلز پارٹی کے رہنما یوسف رضا گیلانی اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری۔ — اے ایف پی/فائل
  • پی پی پی کے چیئرمین نے گیلانی کی خدمات کو سراہتے ہوئے انہیں جمہوریت پسندوں کے لیے “چمکتی ہوئی مثال” قرار دیا۔
  • بلاول کا اسٹیٹ بینک ترمیمی بل کی منظوری میں چیئرمین سینیٹ کے کردار پر افسوس کا اظہار۔
  • وزیراعظم کے معاون خصوصی شہباز گل نے اس اقدام کو سیاسی سرکس قرار دیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے پیر کو پیپلز پارٹی کے رہنما یوسف رضا گیلانی کا سینیٹ میں قائد حزب اختلاف کے عہدے سے استعفیٰ قبول کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ جیو نیوز اطلاع دی

پی پی پی کے چیئرمین نے گیلانی کی خدمات کو سراہا اور انہیں جمہوریت پسندوں کے لیے ایک روشن مثال قرار دیا اور کہا کہ پی پی پی کے نمائندے خود کو ذمہ دار سمجھتے ہیں۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) ترمیمی بل 2021 کی منظوری میں چیئرمین سینیٹ کے کردار پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے بلاول نے کہا کہ چیئرمین نے یہ بل حکومت کی ملی بھگت سے منظور کیا۔

یہ سیاسی سرکس ہے: گل

دریں اثناء وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی رابطے شہباز گل نے ایک ٹویٹ میں اس اقدام کو سیاسی سرکس قرار دیا۔

پی پی پی چیئرمین پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ گیلانی نے بلاول کے کہنے پر ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا، انہوں نے مزید کہا کہ “بل آپ کی مدد سے پاس ہوا، اس لیے آپ ظاہر ہے ان کا استعفیٰ مسترد کر دیں گے”۔

گیلانی نے سینیٹ میں اپوزیشن لیڈر کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔

پیپلز پارٹی کے رہنما اور سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نیچے قدم رکھا سینیٹ میں قائد حزب اختلاف کے طور پر ان کی غیر موجودگی کے بعد پارلیمنٹ کے ایوان بالا میں اسٹیٹ بینک (ترمیمی) بل 2021 کی منظوری دی گئی۔

گیلانی نے سینیٹ کے فلور پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں نے اپنا استعفیٰ اپنی پارٹی کو پیش کر دیا ہے، میں اب اپوزیشن لیڈر نہیں بننا چاہتا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں