14

IHC نے مونال ریسٹورنٹ کے کیس میں فیصلہ محفوظ کر لیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ (IHC)۔  — Geo.tv/File
اسلام آباد ہائی کورٹ (IHC)۔ — Geo.tv/File
  • اپیل کے دوران جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے کہ ‘ایک بار آئٹم اٹھا لیا جائے تو ریسٹورنٹ سیل کر دیا جائے گا’۔
  • جسٹس فاروق نے مونال کے وکیل کو یقین دلایا کہ “عمارت پر قبضے کے دوران امن و امان کی کوئی صورت حال پیدا نہیں ہوگی جیسا کہ مجسٹریٹ کی موجودگی کے دوران ہوتا ہے”۔
  • سماعت کے دوران وکیل نے عمارت کی موجودہ حالت برقرار رکھنے پر اصرار کیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے عمارت سے اشیاء اٹھانے کی مہلت دیے بغیر مونال ریسٹورنٹ پر قبضے کے خلاف متفرق درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔ جیو نیوز پیر کو رپورٹ کیا.

آئیکونک ریسٹورنٹ کو بند کرنے کے فیصلے کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ میں انٹرا کورٹ اپیل کی سماعت ہوئی، جس دوران جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیئے کہ سنگل بنچ کے تفصیلی فیصلہ کے بعد بہت سی چیزیں سامنے آئیں گی، انہوں نے مزید کہا کہ “ایک بار اشیاء اٹھا لیں ریسٹورنٹ سیل کر دیا جائے گا”۔

جسٹس فاروق نے کہا کہ کیپٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کو نہیں معلوم کہ ریسٹورنٹ کے ساتھ کیا کرنا ہے اور ریسٹورنٹ کے وکیل کو خدشہ ہے کہ سی ڈی اے اسے کسی اور کے حوالے کر سکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ’’یہ یقینی ہے کہ جس زمین پر ریستوران بنایا گیا ہے وہاں کوئی تجارتی سرگرمی نہیں ہو سکتی‘‘۔

ریسٹورنٹ کے وکیل نے خدشہ ظاہر کیا کہ مونال کی گرفتاری کے دوران امن و امان کی صورتحال پیدا ہو سکتی ہے جس پر جسٹس فاروق نے کہا کہ ایسی کوئی صورت حال پیدا نہیں کی جائے گی جیسے مجسٹریٹ کی موجودگی میں ضبطی ہو گی۔

سماعت کے دوران وکیل نے عمارت کی موجودہ حالت برقرار رکھنے پر اصرار کیا۔ اس حوالے سے جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے کہا کہ آپ کو سامان باہر لانے کی سہولت مل سکتی ہے تاہم اس حوالے سے مناسب تحریری حکم نامہ جاری کیا جائے گا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں