16

LHC نے PUBG پر پابندی کی درخواست مسترد کر دی۔

لاہور ہائی کورٹ کی عمارت، تصویر: Geo.tv/ فائل
لاہور ہائی کورٹ کی عمارت، تصویر: Geo.tv/ فائل
  • تشدد کے واقعات کے بعد شہری نے PUBG پر پابندی کے لیے LHC سے رجوع کیا۔
  • آج کی سماعت میں عدالت میں پیش نہ ہوئے۔
  • LHC نے درخواست گزار کی جانب سے کیس کی پیروی بند کرنے کی درخواست کو نمٹا دیا۔

لاہور: لاہور ہائی کورٹ (ایل ایچ سی) نے پاکستان میں مقبول آن لائن گیمنگ ایپلی کیشن پلیئرز انانون بیٹل گراؤنڈ (PUBG) پر پابندی لگانے کی درخواست کو پیر کو مسترد کر دیا۔

ایک شہری تنویر سرور نے پرتشدد واقعات اور گیم کے شوقین نوجوانوں کے قتل کے بعد ہائی کورٹ سے رجوع کیا تھا۔

تاہم آج کی سماعت پر درخواست گزار عدالت میں پیش نہیں ہوئے۔

لاہور ہائیکورٹ نے درخواست گزار کی جانب سے کیس کی پیروی بند کرنے کی درخواست نمٹا دی۔

درخواست گزار نے درخواست میں کہا تھا کہ PUBG معاشرے میں عدم برداشت پیدا کر رہا ہے، خاص طور پر نوجوانوں میں جو اس گیم کو کھیلنے کے عادی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ یہ کھیل کھلاڑیوں کی زندگی اور صحت کے لیے خطرہ ہے اور ان کے خاندانوں پر بھی منفی اثرات مرتب کرتا ہے۔

درخواست میں نوجوان نسل کو تباہی سے بچانے کے لیے گیمنگ ایپ پر فوری پابندی لگانے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

درخواست میں وفاقی حکومت، پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) اور دیگر متعلقہ حکام کو فریق بنایا گیا تھا۔

پنجاب پولیس نے PUBG پر پابندی کا مشورہ دیا جب گیم کے ‘عادی’ نے ماں اور بہن بھائیوں کی جان لے لی

دی پنجاب پولیس نے بھی گیم پر پابندی کا مشورہ دیا تھا۔شہر کے کھنہ علاقے میں ایک نوجوان نے اپنے خاندان کے چار افراد کو گولی مار کر ہلاک کرنے کے بعد، اسے “پرتشدد کارروائیوں کو روکنے کے لیے ضروری قرار دیتے ہوئے”۔

ایک پولیس اہلکار نے بتایا کہ ایک 18 سالہ علی زین PUBG کا عادی تھا اور اس نے اپنی ماں، بہنوں اور بھائی کو یہ سوچ کر گولی مار دی کہ وہ گیم کی طرح دوبارہ زندہ ہو جائیں گے۔

آئی ایچ سی نے حکومت کو آن لائن گیم بحال کرنے کا حکم دیا۔

2020 میں، پی ٹی اے نے معاشرے کے مختلف طبقات کی جانب سے متعدد شکایات موصول ہونے کے بعد PUBG گیم کو ملک میں اس کی رسائی کو روک کر معطل کرنے کا اعلان کیا تھا۔

اتھارٹی نے کہا کہ اسے PUBG کے خلاف متعدد شکایات موصول ہوئی ہیں جن میں کہا گیا ہے کہ یہ گیم نشہ آور ہے، وقت کا ضیاع ہے اور بچوں کی جسمانی اور نفسیاتی صحت پر سنگین منفی اثرات مرتب کرتا ہے۔

تاہم، اسلام آباد ہائی کورٹ (IHC) نے PTA کی جانب سے گیم کو بلاک لسٹ میں رکھنے کے اعلان کے چند گھنٹے بعد ہی حکومت کو آن لائن گیم پر سے پابندی ہٹانے کا حکم دیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں