15

کامل علی آغا کو شجاعت کو اعلیٰ عہدے سے ہٹانے کا نوٹس

مسلم لیگ (ق) نے اپنے پنجاب کے جنرل سیکرٹری کامل علی آغا کو پارٹی اجلاس بلانے اور چوہدری شجاعت حسین کو صدر کے عہدے سے ہٹانے کا غیر قانونی اقدام اٹھانے پر شوکاز نوٹس جاری کر دیا ہے۔

نوٹس جاری کرنے کا فیصلہ جمعرات کو اسلام آباد میں مسلم لیگ (ق) کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے اجلاس میں کیا گیا جس میں پارٹی کے ارکان بشمول سیکرٹری جنرل طارق بشیر چیمہ، صوبائی صدور اور مرکزی عہدیداران نے شرکت کی۔

شرکاء نے متفقہ قراردادوں کے ذریعے چوہدری شجاعت کی قیادت پر مکمل اعتماد کا اظہار کیا۔

مسلم لیگ (ق) سندھ، بلوچستان، خیبرپختونخوا اور گلگت بلتستان چیپٹرز کے صدور نے گزشتہ ہفتے لاہور میں ہونے والے پارٹی اجلاس سے انکار کر دیا۔

انہوں نے چوہدری شجاعت کی صحت سے متعلق اعلان کے ساتھ ساتھ لاہور اجلاس کی بھی شدید مذمت کی جس میں انہیں اور چیمہ کو ان کے پارٹی عہدوں سے ہٹانے کی جرأت ہوئی۔

جمعرات کو پارٹی کے سی ای سی کی طرف سے منظور کی گئی ایک اور قرارداد میں کامل علی آغا کی طرف سے 10 اگست کو طلب کیے گئے آئندہ اجلاس کو “غیر ضروری” قرار دیا گیا اور کہا گیا کہ پنجاب تنظیم کو کوئی بھی اجلاس طلب کرنے کا اختیار نہیں ہے۔ مزید برآں، سینیٹر آغا کی جانب سے پہلے بلائے گئے اجلاس میں شرکت کرنے والے پارٹی رہنماؤں کو بھی معطل کر دیا جائے گا۔

چونکہ گزشتہ ہفتے لاہور میں سینیٹر آغا کی سربراہی میں مسلم لیگ (ق) کے ‘سی ای سی’ اجلاس میں 10 دن میں انٹرا پارٹی انتخابات کرانے کا فیصلہ کیا گیا تھا اور 5 رکنی الیکشن کمیشن تشکیل دیا گیا تھا، معلوم ہوا ہے کہ مسلم لیگ (ق) نے اس سے رابطہ کیا ہے۔ الیکشن کمیشن اور پارٹی کے پنجاب جنرل سیکرٹری کی طرف سے بلائے گئے “غیر قانونی” الیکشن کو روکنے کی کوشش کی۔

مسلم لیگ (ق) اور خاص طور پر گجرات کے چوہدریوں کے خاندان میں دراڑ اس وقت سامنے آئی جب پارٹی صدر شجاعت نے چوہدری پرویز الٰہی سمیت پارٹی کے 10 ایم پی ایز کو مسلم لیگ (ن) کے حمزہ شہباز کو ووٹ دینے کے لیے خط لکھا تھا۔ خود مسٹر الٰہی کے خلاف وزیراعلیٰ کا انتخاب لڑ رہے ہیں۔

مسٹر الٰہی نے مسلم لیگ (ق) کے تمام 10 ایم پی ایز کے ووٹوں سے وزیر اعلیٰ کا انتخاب جیتنے کے فوراً بعد، سینیٹر آغا نے سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کا اجلاس بلایا اور صدر شجاعت اور سیکرٹری جنرل چیمہ کی برطرفی سمیت مختلف قراردادیں منظور کیں۔

اجلاس میں کمیٹی کے کل 150 ارکان میں سے 83 نے شرکت کی۔ اجلاس کا کورم 40 ارکان پر مشتمل تھا۔

.

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں