21

چیئرمین نیب کے لیے جسٹس (ر) مقبول باقر سب سے آگے: ذرائع

جسٹس (ر) مقبول باقر۔  سپریم کورٹ آف پاکستان
جسٹس (ر) مقبول باقر۔ سپریم کورٹ آف پاکستان
  • چیئرمین نیب کے لیے جن ناموں پر غور کیا جا رہا ہے ان میں جسٹس (ر) مقبول باقر سرفہرست ہیں۔
  • اپوزیشن لیڈر راجہ ریاض نے جسٹس باقر کی مجوزہ تقرری پر اعتراض کا اظہار کیا۔
  • پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ جسٹس باقر معقول آدمی ہیں۔

جسٹس (ریٹائرڈ) مقبول باقر کا نام ان امیدواروں کی فہرست میں سرفہرست ہے جس پر حکومت قومی احتساب بیورو (نیب) کے اگلے چیئرمین کے عہدے کے لیے غور کر رہی ہے، یہ ہفتہ کو سامنے آیا۔

ذرائع کے مطابق وزیر اعظم شہباز شریف اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین آصف علی زرداری کے درمیان ملاقات میں جسٹس باقر کے نام کا اعتراف کیا گیا جب کہ اتحادی حکومت کی تمام جماعتوں نے بھی اس بات پر اتفاق کیا ہے کہ وہ اس عہدے کے لیے موزوں ترین امیدوار تھے۔

علاوہ ازیں اپوزیشن لیڈر راجہ ریاض نے جسٹس باقر کی بطور چیئرمین نیب کی مجوزہ تقرری پر عدم اعتراض کا اظہار کیا ہے۔

اگر کوئی رکاوٹیں نہ آئیں تو اتحادی جماعتوں نے کہا ہے کہ جسٹس باقر کو نیب کا اگلا چیئرمین مقرر کیا جائے گا۔

جسٹس باقر کو سندھ ہائی کورٹ سے سپریم کورٹ میں ترقی دی گئی تھی اور وہ پیر 4 اپریل 2022 کو سپریم کورٹ کے جج کے طور پر ریٹائر ہوئے تھے۔

حکومتی ذرائع کے مطابق جسٹس مقبول کا عدالتی ریکارڈ غیر محفوظ ہے۔

دوسری جانب پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری نے اسلام آباد ہائی کورٹ کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایک کٹھ پتلی کو ڈمی اپوزیشن لیڈر مقرر کیا گیا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ چیئرمین نیب کے لیے نامزدگیوں کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔

فواد نے کہا کہ جسٹس (ر) مقبول باقر ایک معقول آدمی ہیں، امید ہے کہ وہ اس عمل کا حصہ نہیں بنیں گے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں