15

پاک افغان سرحد پر برفانی تودہ گرنے سے 20 کے قریب افراد ہلاک ہو گئے۔

برفباری کے دوران کارکن سڑک صاف کرنے میں مصروف — رائٹرز/فائل
برفباری کے دوران کارکن سڑک صاف کرنے میں مصروف — رائٹرز/فائل
  • حکام کا کہنا ہے کہ امدادی کارکن برفانی تودہ گرنے کی جگہ پر تلاش کر رہے ہیں۔
  • غیر محفوظ پہاڑی سرحد سے روزانہ سینکڑوں افغان غیر قانونی طور پر پاکستان آتے ہیں۔
  • اہلکار کا کہنا ہے کہ ’’انیس لاشیں پہلے ہی برآمد کی جا چکی ہیں۔

جلال آباد: کم از کم 19 افراد پیر کو افغانستان سے پاکستان جاتے ہوئے ایک برفانی تودہ گرنے سے ہلاک ہو گئے۔

روزگار کی تلاش میں یا تجارت کے لیے ضروری سامان خریدنے کے لیے ہر روز سینکڑوں افغان غیر قانونی طور پر پہاڑی سرحد سے گزر کر پاکستان آتے ہیں۔

یہ بات مشرقی کنڑ صوبے کے اطلاعات کے سربراہ نجیب اللہ حسن ابدال نے بتائی اے ایف پی امدادی کارکن برفانی تودے کی جگہ پر ابھی تک تلاش کر رہے تھے۔

انہوں نے کہا کہ انیس لاشیں پہلے ہی برآمد کی جا چکی ہیں۔

اگست میں طالبان کے دوبارہ اقتدار میں آنے کے بعد سے پاکستان-افغان سرحد کے پار غیر قانونی آمدورفت بڑھ گئی ہے، جس نے ملک کو شدید بحران میں ڈال دیا ہے اور دسیوں ہزار افراد بے روزگار ہو گئے ہیں۔

پاکستان پوری 2,670 کلومیٹر (1,660 میل) سرحد پر باڑ لگانے کی کوشش کر رہا ہے، جسے برطانوی نوآبادیاتی منتظم کے لیے ڈیورنڈ لائن کے نام سے جانا جاتا ہے جس نے اسے پہلی بار کھینچا تھا۔

تاجروں اور اسمگلروں نے صدیوں سے خطوں کو عبور کرنے اور ٹیکس ادا کرنے سے بچنے کے لیے دور دراز کے پہاڑی راستوں کا استعمال کیا ہے۔

لیکن اس علاقے میں جان لیوا برفانی تودے گرنا عام بات ہے۔

2015 میں ملک بھر میں تباہ کن برفانی تودے گرنے سے 250 سے زائد افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں