16

پاکستان 22 فروری کو 50,000 ٹن بھارتی گندم افغانستان لے جائے گا۔

طورخم بارڈر کراسنگ پاکستان اور افغانستان کے درمیان اہم تجارتی رابطہ ہے۔  تصویر: رائٹرز
طورخم بارڈر کراسنگ پاکستان اور افغانستان کے درمیان اہم تجارتی رابطہ ہے۔ تصویر: رائٹرز
  • پاکستان اور بھارت نے تین ماہ کی بات چیت کے بعد گندم کی نقل و حمل کے معاملات کو حتمی شکل دی۔
  • پاکستان گندم افغانستان لے جانے کے لیے بھارتی ٹرکوں کا استعمال قبول نہیں کرتا۔
  • ممالک نے افغان ٹرکوں میں گندم پاکستان کے راستے منتقل کرنے پر اتفاق کیا۔

اسلام آباد: پاکستان اور بھارت نے افغانستان کو جاری انسانی بحران سے نمٹنے میں مدد کے لیے گندم اور طبی امداد کی فراہمی کے معاملات کو حتمی شکل دے دی ہے۔ خبر اطلاع دی

پاکستان کے راستے 50 ہزار ٹن بھارتی گندم افغانستان پہنچانے کا عمل 22 فروری سے شروع ہوگا۔

سفارتی ذرائع نے بتایا کہ پاکستان اور بھارت گزشتہ تین ماہ سے گندم کی نقل و حمل پر بات چیت میں مصروف تھے۔

تاہم، ہندوستان کی جانب سے معاملے میں سست روی کا مظاہرہ کرنے، میکانزم پر اختلافات کو بنیاد بنانے کے باوجود طویل بات چیت کے بعد مسائل کو ختم کر دیا گیا۔

پاکستان نے گندم لے جانے کے لیے ہندوستانی ٹرکوں کے استعمال کی ہندوستانی شرط کو قبول نہیں کیا لہذا ممالک نے افغان ٹرکوں میں نقل و حمل کرنے پر رضامندی ظاہر کی۔

بھارت نے 60 افغان ٹرکوں اور ان کے ڈرائیوروں کی فہرست حوالے کرتے ہوئے کہا کہ وہ 22 فروری سے گندم کی سپلائی شروع کر دیں گے۔

امداد کو طورخم بارڈر کے ذریعے جلال آباد پہنچایا جائے گا جہاں اسے ورلڈ فوڈ پروگرام کے حوالے کیا جائے گا۔

پاکستان نے بھارت پر واضح کر دیا ہے کہ وہ افغانستان میں انسانی بحران کی وجہ سے نقل و حمل کی سہولت فراہم کر رہا ہے اس لیے اسے افغانستان میں دیگر اشیاء بھیجنے کی نظیر کے طور پر نہ لیا جائے۔

.

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں