25

پاکستان میں گدھوں کی آبادی میں مسلسل اضافہ دیکھا جا رہا ہے: اقتصادی سروے

اس بے خبر تصویر میں ایک گدھا پوز کر رہا ہے۔  - رائٹرز/فائل
اس بے خبر تصویر میں ایک گدھا پوز کر رہا ہے۔ – رائٹرز/فائل
  • مالی سال 2020-21 کے دوران گدھوں کی آبادی 5.7 ملین تک بڑھ گئی۔
  • اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ پچھلے کچھ سالوں کے دوران گدھوں کی آبادی میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔
  • 20-2019 میں 5.5 ملین اور 2020-21 میں 5.6 ملین گدھے تھے۔

اسلام آباد: جمعرات کو جاری ہونے والے اقتصادی سروے (PES) 2021-22 کے مطابق، گزشتہ مالی سال کے دوران پاکستان میں گدھوں کی آبادی بڑھ کر 5.7 ملین ہو گئی۔

اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ پچھلے کچھ سالوں کے دوران گدھوں کی آبادی میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے کیونکہ 2019-2020 میں ان میں سے 5.5 ملین اور 2020-21 میں 5.6 ملین تھے۔

پاکستان اکنامک سروے 2021-22
پاکستان اکنامک سروے 2021-22

اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ ملک میں مویشیوں کی آبادی بڑھ کر 53.4 ملین ہو گئی ہے – بھینسوں کی تعداد 43.7 ملین، بھیڑیں 31.9 ملین اور بکریوں کی تعداد 31.9 ملین ہو گئی ہے۔

اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ ملک میں 1.1 ملین اونٹ، 0.4 ملین گھوڑے اور 0.2 ملین خچر تھے۔ واضح رہے کہ 2017-18 کے بعد سے ان نمبروں میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی ہے۔

لائیو سٹاک نے 2021 سے 22 تک زرعی ویلیو ایڈیشن میں تقریباً 61.9 فیصد اور قومی جی ڈی پی میں 14.0 فیصد کا حصہ ڈالا۔

پاکستان کے دیہی علاقوں میں رہنے والوں کی سب سے اہم معاشی سرگرمی مویشی پالنا ہے۔ 80 لاکھ سے زیادہ دیہی خاندان مویشیوں کی پیداوار میں مصروف ہیں اور اپنی آمدنی کا تقریباً 35-40% اس شعبے سے حاصل کر رہے ہیں۔

لائیو سٹاک کی مجموعی ویلیو ایڈیشن 5,269 بلین روپے (2020-21) سے بڑھ کر 5,441 بلین روپے (2021-22) ہو گئی ہے، جو کہ 3.26 فیصد کا اضافہ دکھاتی ہے۔

دستاویز میں کہا گیا ہے کہ حکومت نے ملک میں اقتصادی ترقی، خوراک کی حفاظت اور غربت کے خاتمے کے لیے اس شعبے پر اپنی توجہ کی تجدید کی ہے۔

اس میں مزید کہا گیا کہ لائیو سٹاک کی ترقی کی مجموعی حکمت عملی “پبلک سیکٹر کے ساتھ پرائیویٹ سیکٹر کی زیر قیادت ترقی کو فروغ دینے کا عزم کرتی ہے جو پالیسی مداخلتوں کے ذریعے سازگار ماحول فراہم کرتی ہے”۔

ریگولیٹری اقدامات کا مقصد ویٹرنری ہیلتھ کوریج، پالنے کے طریقوں، جانوروں کی افزائش کے طریقوں، مصنوعی حمل کی خدمات، جانوروں کی خوراک کے لیے متوازن راشن کا استعمال، اور مویشیوں کی بیماریوں پر قابو پا کر فی یونٹ جانوروں کی پیداواری صلاحیت کو بڑھانا ہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں