25

ٹرین گینگ ریپ کیس میں تین ملزمان گرفتار: آئی جی ریلوے پولیس

ریلوے پولیس کے انسپکٹر جنرل (آئی جی) فیصل شاہکار 31 مئی 2022 کو لاہور میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں۔
ریلوے پولیس کے انسپکٹر جنرل (آئی جی) فیصل شاہکار 31 مئی 2022 کو لاہور میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں۔
  • آئی جی ریلوے پولیس کا کہنا ہے کہ ملزمان کا ڈی این اے لیا جائے گا۔
  • وہ کہتے ہیں، ’’جو عملہ ڈیوٹی پر تھا وہ نجی کمپنی سے تعلق رکھتا تھا۔
  • متاثرہ کا کہنا ہے کہ ایف آئی آر میں تین افراد کا ذکر کیا تھا۔

لاہور: سسرالیوں سے ملنے کے بعد ٹرین میں کراچی جانے والی خاتون سے مبینہ اجتماعی زیادتی کے کیس میں تین ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا۔

لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے انسپکٹر جنرل (آئی جی) ریلوے پولیس فیصل شاہکار نے کہا کہ تینوں افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور ان کا ڈی این اے ٹیسٹ کرایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ملزمان کو گرفتار کرنا ایک چیلنج تھا کیونکہ وہ پولیس سے چھپے ہوئے تھے اور ان میں سے دو نے اپنے فون بند کر رکھے تھے۔

آئی جی شاہکار نے کہا کہ جس ٹرین میں یہ واقعہ پیش آیا وہ ایک نجی کمپنی چلا رہی تھی، انہوں نے مزید کہا کہ ٹرین میں ان کا اپنا عملہ تھا۔

انہوں نے کہا کہ کمپنی کو ملازمین کی خدمات حاصل کرنے سے پہلے ان کا پس منظر چیک کرنا چاہیے تھا۔

ریلوے پولیس کے سربراہ نے کہا کہ “نجی کمپنی کے مالک کے خلاف فوجداری اور انتظامی کارروائی کی جائے گی جو ٹرین چلا رہی تھی۔”

انہوں نے مزید کہا کہ کمپنی کو شوکاز نوٹس دیا جائے گا اور اس کا معاہدہ منسوخ کر دیا جائے گا۔

واقعے کے بارے میں بات کرتے ہوئے آئی جی شاہکار نے بتایا کہ خاتون اپنے شوہر سے ملنے ملتان آئی اور اپنے بچوں کو ساتھ نہ لانے پر اس سے جھگڑا ہوا۔

“متاثرہ بغیر ٹکٹ کے ٹرین میں سوار ہوئی اور ٹکٹ چیکر خاتون کو ٹرین میں اے سی سیٹ دینے کا کہہ کر اپنے ساتھ لے گیا۔”

ان کا کہنا تھا کہ متاثرہ نے تین افراد کا ذکر کیا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ مقدمہ کراچی کے علاقے سے ہے اور ملزم کو عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

ریلوے عملے نے ٹرین میں سفر کرنے والی خاتون کے ساتھ اجتماعی عصمت دری کی۔

جیو نیوز نے پیر کو رپورٹ کیا کہ بہاؤالدین زکریا ایکسپریس کے تین ریلوے عملے – دو ٹکٹ چیکرس اور ان کے انچارج نے ایک خاتون مسافر کے ساتھ اجتماعی عصمت دری کی۔ ٹرین ملتان اور کراچی کے درمیان چلتی ہے۔

کراچی سٹی اسٹیشن پولیس نے خاتون کی شکایت پر ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کرلیا۔ اس نے پولیس کے پاس اپنا بیان بھی ریکارڈ کرایا ہے۔

ایف آئی آر کے مطابق متاثرہ لڑکی اپنے سسرال مظفر گڑھ سے نجی شعبے کے تحت چلنے والی ٹرین کے ذریعے کراچی جا رہی تھی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں