14

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ

وزیراعلیٰ مراد علی شاہ 02 فروری کو کراچی میں جماعت اسلامی کے امیر حافظ نعیم الرحمن کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں۔  - فیس بک
وزیراعلیٰ مراد علی شاہ 02 فروری کو کراچی میں جماعت اسلامی کے امیر حافظ نعیم الرحمن کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں۔ – فیس بک
  • سی ایم شاہ کا کہنا ہے کہ بلدیاتی قانون جلد بازی میں منظور کیا گیا اور پی پی پی کی زیرقیادت صوبائی حکومت کو 30 نومبر سے پہلے قانون ای سی پی کو پیش کرنا تھا۔
  • “ناصر شاہ نے قانون کا مسودہ تیار کرنے سے پہلے فریقین کو ان کی تجاویز کے لیے خطوط لکھے،” وہ کہتے ہیں۔
  • وزیراعلیٰ کے مطابق ناصر شاہ کی سربراہی میں کمیٹی دو ہفتوں میں فیصلے کرے گی۔

کراچی: وزیراعلیٰ مراد علی شاہ نے بدھ کے روز کہا کہ بلدیاتی قانون کو جلد بازی میں منظور کیا گیا، یہ کہتے ہوئے کہ پیپلز پارٹی کی زیرقیادت صوبائی حکومت کو 30 نومبر سے پہلے یہ قانون الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کو پیش کرنا تھا۔ جیو نیوز اطلاع دی

جماعت اسلامی کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمن کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ سندھ کے وزیر بلدیات ناصر حسین شاہ نے 2013 کے لوکل گورنمنٹ ایکٹ میں ترامیم کے لیے سیاسی جماعتوں سے بات کی اور رابطہ کیا۔ متعلقین.

ناصر شاہ نے قانون کا مسودہ تیار کرنے سے پہلے فریقین کو ان کی تجاویز کے لیے خطوط لکھے۔

وزیراعلیٰ نے کہا کہ جماعت اسلامی نے صحت اور تعلیم کے اداروں کی مقامی حکومت کو واپسی کا مطالبہ کیا، انہوں نے مزید کہا کہ کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ (کے ڈبلیو ایس بی) کو صوبائی حکومت کے تعاون کی ضرورت ہے۔

جے آئی کے دھرنے کے بارے میں بات کرتے ہوئے شاہ نے کہا کہ پارٹی سیاسی اور جمہوری حل کے ساتھ آئی ہے۔

سندھ واحد صوبہ ہے جس نے لوکل گورنمنٹ ایکٹ اسمبلی میں پاس کیا۔

کابینہ نے معاہدوں کے مطابق بل میں ترامیم کا فیصلہ کیا ہے اور کمیٹی کی سربراہی ناصر شاہ کریں گے، وزیراعلیٰ نے کہا کہ کمیٹی دو ہفتوں میں فیصلے کرے گی۔

جے آئی نے دھرنا ختم کر دیا کیونکہ سندھ حکومت ایل بی قانون میں ترمیم کرنے پر راضی ہے۔

28 جنوری کو جماعت اسلامی نے کراچی میں تقریباً ایک ماہ بعد دھرنا ختم کرنے کا اعلان کیا کیونکہ سندھ حکومت کے ساتھ مذاکرات کا نتیجہ نکلا۔ مقامی حکومتوں کو کنٹرول کرنے والا قانون.

جماعت اسلامی کراچی کے رہنما حافظ نعیم الرحمان نے کہا کہ میگا سٹی کو درپیش مسائل کے حل کے لیے 29 روز تک دھرنا جاری رہا۔

سندھ کے وزیر بلدیات سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ جماعت اسلامی اور صوبائی حکومت نے ایک تحریری معاہدہ کیا ہے، جس کے مطابق صحت اور تعلیم سے متعلق بلدیاتی اداروں کو دوبارہ بلدیاتی اداروں کے حوالے کیا جائے گا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں