15

وزارت داخلہ نے سابق چیف جسٹس گلزار احمد کو سیکیورٹی فراہم کرنے کی منظوری دے دی۔

چیف جسٹس آف پاکستان گلزار احمد۔  تصویر: فائل
چیف جسٹس آف پاکستان گلزار احمد۔ تصویر: فائل
  • وزارت داخلہ کا کہنا ہے۔ سابق چیف جسٹس گلزار احمد سے سیکیورٹی واپس نہیں لی جا رہی۔
  • سابق اعلیٰ جج کا کہنا ہے کہ وہی سیکیورٹی جاری رہے گی۔
  • کے جواب میں فیصلہ آتا ہے۔ سابق چیف جسٹس گلزار احمد کی سیکیورٹی کے لیے سپریم کورٹ کا خط۔

وزارت داخلہ نے سپریم کورٹ (ایس سی) کے رجسٹرار کی درخواست پر سابق چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار احمد کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کرنے پر جمعہ کو رضامندی دی۔

سپریم کورٹ کے رجسٹرار نے سابق چیف جسٹس گلزار احمد کی سیکیورٹی کے لیے وزارت داخلہ کو خط لکھا تھا۔

خط کے جواب میں وزارت داخلہ نے بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ سابق اعلیٰ جج سے سیکیورٹی واپس نہیں لی جارہی۔

وزارت داخلہ نے کہا، “ریٹائرڈ جسٹس گلزار احمد کو وہی سیکیورٹی حاصل رہے گی جو انہوں نے پاکستان کے چیف جسٹس کے عہدے پر فائز رہنے کے دوران حاصل کی تھی۔”

سپریم کورٹ کے اہلکار نے اپنے خط میں کہا تھا کہ سابق چیف جسٹس نے دہشت گردی، ماورائے عدالت قتل، تجاوزات اور اقلیتوں کے حقوق سمیت کئی ہائی پروفائل کیسز میں فیصلے سنائے ہیں۔

عہدیدار نے کہا کہ جسٹس (ر) گلزار احمد کو بطور چیف جسٹس فراہم کی گئی سیکیورٹی برقرار رکھی جائے۔

رجسٹرار نے یکم فروری کو ان کی ریٹائرمنٹ سے صرف چار دن پہلے 27 جنوری کو لکھے گئے خط میں کہا کہ سابق چیف جسٹس کی ریٹائرمنٹ کے بعد بھی ان کی سیکیورٹی کے لیے رینجرز کو تعینات کیا جانا چاہیے۔

یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ جسٹس گلزار احمد دو سال سے زائد عرصے تک اعلیٰ عدالتی عہدے پر رہنے کے بعد ریٹائر ہوئے۔ جسٹس احمد نے 21 دسمبر 2019 کو سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی جگہ اپنا عہدہ سنبھالا۔

جسٹس (ر) گلزار احمد نے کرک میں ہندو مندر پر حملے سمیت اقلیتوں سے متعلق متعدد مسائل کا ازخود نوٹس لیا تھا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں