26

مظفرنگر کے قصبہ جانسٹھ میں بعد مجلس نامہ نگاروں سے مولانا حسن علی راجانی نے کہا کہ جب تک جہالت کا خاتمہ نہ ہوگا تب تک دیش کو منافرت کی آگ سے نہیں بچایا جا سکتا ہے

جانسٹھ /مظفر نگر : 19 مئی : سید پرویز حسن پردھان کی والدہ کی مجلس چہلم پڑھنے آیے بین الاقوامی شہرت یافتہ خطیب عابد بلگرامی صاحب اور مولانا سید مطلوب مہدی عابدی صاحب اور مولانا راجانی حسن علی صاحب اور مولانا یعسوب عباس صاحب نے اپنی اپنی تقاریر میں لوگوں کو نصیحت کی کہ دنیا چند روزہ ہے اس کے بعد اصل زندگی آخرت ہی ہے تو ہمیں زیادہ سے زیادہ آخرت پر دھیان دینا چاہیۓ اور بعد مجلس نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے مولانا عابد بلگرامی صاحب نے علم کے اوپر زور دیتے ہوئے کہا کہ علم ہی ایک ایسی کنجی ہے جس سے دنیا کے سارے مسائل کے حل کی گتھیاں سلجھائی جا سکتی ہے تو مولانا مطلوب صاحب نے بھی نامہ نگاروں سے گیان واپی مسجد کا تزکرہ کرتے ہوئے کہا کہ سوال گیان واپی مسجد کا نہیں ہے سوال فقط اتنا ہے کہ ملک سے جھل کا خاتمہ ہونا چاہئے اور مزید کہا کہ جب تک جہالت ہوگی تب تک کچھ شر پسند لوگ ملک کے ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کرتے رہینگے وہیں پر میڈیا نے جب مولانا راجانی حسن علی سے پوچھا کہ کب تک ملک کے حالات ایسے ہی بگڑے رہینگے اس پر مولانا راجانی نے صاف صاف کہا کہ اس کی مثال آج ہمارے پڑوسی ملک افغانستان کی موجود ہے کہ وہاں پر تعلیم کا تو فقدان ہے ہی اوپر سے طالبان عورتوں کی تعلیم کی مخالفت کرتے ہیں تو اب جہاں جہالت ہوگی وہاں پر شر پسند عناصر اپنے پیر پھیلائےگے اور فتنہ فساد ہوتا رہیگا جس کا پورے پورہ فائدہ امریکہ اور اسرائیل اٹھائینگے لہذا چاہیئے ہے کہ مسلمان تعلیم حاصل کریں تاکہ دیگر اقوام ان کا غیر فائدہ نہ اٹھائیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں