17

شوکت ترین نے سعودی عرب سے پاکستان کو ملنے والے 3 ارب ڈالر کے فنڈز کی تفصیلات بتا دیں۔

وزیر خزانہ شوکت ترین۔  تصویر: ریڈیو پاکستان
وزیر خزانہ شوکت ترین۔ تصویر: ریڈیو پاکستان
  • وزیر خزانہ شوکت ترین نے سعودی عرب سے ملنے والے فنڈز کی تفصیلات بتا دیں۔
  • کہتے ہیں سعودی عرب کی جانب سے 4 فیصد شرح سود پر رقوم جمع کرائی گئی ہیں۔
  • قرض کی واپسی کا ٹائم فریم ایک سال ہے۔

سینیٹ سیکرٹریٹ کی جانب سے جاری کردہ تحریری بیان کے مطابق، وفاقی وزیر برائے خزانہ و محصولات شوکت ترین نے جمعہ کو اس معاہدے کی تفصیلات کا انکشاف کیا جس کے تحت پاکستان کو سعودی عرب سے 3 ارب ڈالر کے فنڈز ملے تھے۔

پاکستان کے مرکزی بینک اور سعودی فنڈ برائے ترقی کے درمیان طے پانے والے ایک معاہدے کے تحت 4 دسمبر 2021 کو اسٹیٹ بینک آف پاکستان (SBP) میں 3 بلین ڈالر کی انتہائی متوقع قسط جمع کرائی گئی تھی۔

یہ تفصیلات 25 جنوری کو ہونے والے سینیٹ اجلاس میں کیے گئے ایک سوال کے جواب میں شیئر کی گئیں، جسے چند دیگر سوالات کے ساتھ موخر کر دیا گیا تھا۔

“کیا وزیر خزانہ اور محصولات اس معاہدے کی تفصیلات بتانے پر خوش ہوں گے جس کے تحت دسمبر 2021 میں پاکستان کو سعودی عرب سے 3 بلین ڈالر ملے تھے، جس میں سود کی شرح اور ٹائم فریم اور مذکورہ کی واپسی کے لیے طے شدہ قسطوں کی تعداد بھی بتائی گئی تھی۔ قرض،” بیان میں سینیٹر مشتاق احمد کے پوچھے گئے سوال کا حوالہ دیا گیا۔

اس کی پیروی سینیٹر کی طرف سے مانگی گئی تفصیلات کے ساتھ کی گئی، جس کے مطابق، فنڈز 4 فیصد شرح سود پر جمع کیے گئے، جو سہ ماہی میں ادا کیے جائیں گے۔

مزید یہ کہ اس قرض کی واپسی کا ٹائم فریم ایک سال ہے اور اسے “سعودی عرب کے قواعد و ضوابط” کے تحت ایک قسط میں ادا کرنا ہوگا۔

بعد ازاں سینیٹ اجلاس کے دوران ایوان کو بتایا گیا کہ پاکستان سعودی تیل کی سہولت کو موخر ادائیگی پر اگلے ماہ سے استعمال کرنا شروع کر دے گا۔ ریڈیو پاکستان اطلاع دی

“ہم نے بین الاقوامی پٹرولیم کی قیمتوں میں اضافے کا سارا بوجھ عوام پر ڈالنے کی کوشش کی ہے،” ترین نے وقفہ سوالات کے دوران کہا۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے سیلز ٹیکس اور پیٹرولیم ڈویلپمنٹ لیوی میں کمی کرکے عوام کو ریلیف فراہم کیا ہے۔

وزیر نے مزید کہا کہ گزشتہ سال کے دوران اسٹیٹ بینک کے زرمبادلہ کے ذخائر میں اضافے سے روپے پر دباؤ کو روکنے میں مدد ملے گی۔

انہوں نے کہا کہ تجارتی خسارے میں 1.5 بلین ڈالر کی کمی کے ساتھ پاکستان کی برآمدات اور ترسیلات زر میں اضافہ ہوا ہے۔

ایک ضمنی سوال کے جواب میں ترین نے کہا کہ پاکستان نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (FATF) کی جانب سے پیش کی گئی 28 شرائط میں سے 27 کو پورا کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے اپنے اہداف حاصل کر لیے ہیں، امید ہے کہ FATF کے اگلے جائزے میں ملک گرے لسٹ سے نکل آئے گا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں