15

سندھ میں دو خواتین کو اغوا، اجتماعی زیادتی اور برہنہ پریڈ

پس منظر میں پولیس وین کے ساتھ ایک پولیس اہلکار بندوق پکڑے کھڑا ہے۔  تصویر: Geo.tv/ فائل
پس منظر میں پولیس وین کے ساتھ ایک پولیس اہلکار بندوق پکڑے کھڑا ہے۔ تصویر: Geo.tv/ فائل
  • تانگری برادری کے 20 سے زائد مردوں نے راجپوت قبیلے کے رکن کے گھر پر چھاپہ مار کر دو خواتین کو اغوا کر کے زیادتی کا نشانہ بنایا۔
  • ان کا ارادہ تانگری عورت اور راجپوت مرد کی اپنی مرضی سے شادی کا بدلہ لینا تھا۔
  • پولیس نے اغوا کے 20 گھنٹے بعد خواتین کو بازیاب کرالیا، ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کرلیا۔

کراچی: سندھ کے ضلع میرپورخاص کے نوکوٹ ٹاؤن کے نواحی گاؤں میں دو خواتین کو مبینہ طور پر اغوا، برہنہ پریڈ اور اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔ خبر مقامی ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی گئی۔

معاملے سے باخبر ذرائع نے بتایا کہ تانگری برادری کے 20 سے زائد افراد نے ہفتہ کی رات دیر گئے نفیس نگر میں 16 میل کے رہائشی محمد حنیف راجپوت کے گھر پر چھاپہ مارا اور خاندان کی دو خواتین کو اغوا کر لیا۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ واقعہ برادری کی ایک خاتون کی اپنی مرضی سے شادی سے ہوا، جس نے اپنا گھر چھوڑ کر ایک راجپوت مرد سے شادی کی۔

تاہم پولیس کی مدد سے مقتولین کو اغوا کے 20 گھنٹے بعد بازیاب کرایا گیا جب پی پی پی کے ایم پی اے میر طارق تالپور نے واقعے کا نوٹس لیا اور علاقے کا دورہ کیا۔

نوکوٹ کے رورل ہیلتھ سنٹر میں ڈاکٹر زیبنسہ کولاچی کی طرف سے کئے گئے ابتدائی طبی معائنے میں اس بات کی تصدیق ہوئی کہ دونوں متاثرین کو زیادتی کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

میڈیا سے بات کرتے ہوئے متاثرین نے انکشاف کیا کہ اغوا کار انہیں اپنے علاقے میں لے گئے اور گھنٹوں ان کے ساتھ اجتماعی زیادتی کی۔

ان کا کہنا تھا کہ “ہم دونوں سے ہمارے کپڑے اتارے گئے، برہنہ ہو کر پریڈ کرنے پر مجبور کیا گیا اور پھر کئی مردوں نے نامعلوم مقام پر حراست کے دوران کئی گھنٹوں تک ریپ کیا۔”

قصبے میں اس ہولناک فعل کے خلاف احتجاج کرنے والے مقتولین کے لواحقین نے الزام لگایا کہ محمد حنیف راجپوت کے گھر پر تانگری برادری کے بدنام زمانہ شرپسندوں نے حملہ کیا، توڑ پھوڑ کی، جو خاندان کی دو خواتین کو بندوق کی نوک پر لے گئے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ نوکوٹ پولیس مسلح افراد کا پیچھا کرنے اور انہیں گرفتار کرنے سے گریزاں ہے، جو پہلے ہی علاقے میں مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث تھے۔

ایف آئی آر، پاکستان پینل کوڈ کی متعلقہ دفعات کے تحت، ایک مغوی خاتون کے شوہر علی رضا راجپوت کی شکایت پر ملزم مردوں کے خلاف درج کی گئی، جب پیپلز پارٹی کے ایم پی اے نے ڈی ایس پی، ایس ایچ او اور دیگر سے بات کی۔ پولیس حکام.

متاثرہ کے والدین نے الزام لگایا کہ اگر پولیس اہلکار بروقت کارروائی کرتے تو خواتین کی جان بچ جاتی۔ انہوں نے الزام لگایا کہ گن پوائنٹ پر ملزمان راجپوت کے گھر سے سونا، نقدی اور دیگر قیمتی سامان بھی لے گئے۔

انہوں نے مزید کہا، “کوئی بھی ٹانگری برادری کے ان گروہوں کے لوگوں سے محفوظ محسوس نہیں کرتا لیکن نوکوٹ ٹاؤن کی پولیس نے کبھی ان کے خلاف کوئی کارروائی کرنے کی زحمت نہیں کی۔”

میرپورخاص کے ایس ایس پی کیپٹن (ر) اسد علی چوہدری سندھ حکومت کے اعلیٰ حکام کی ہدایت پر نوکوٹ ٹاؤن پہنچے اور گاؤں والوں اور متاثرہ خواتین سے معلومات حاصل کیں۔

ایس ایس پی نے کہا کہ پولیس ٹیم اب تک ایف آئی آر میں نامزد 12 ملزمان کو گرفتار کر چکی ہے اور باقی کو بھی جلد گرفتار کر لیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ متاثرین کے ساتھ انصاف کیا جائے گا۔

ایس ایس پی کا مزید کہنا تھا کہ چونکہ ابتدائی تحقیقات میں متاثرہ خواتین کے خلاف جنسی زیادتی کی تصدیق ہوئی ہے اس لیے انہوں نے نمونے ڈی این اے ٹیسٹ کے لیے بھجوا دیے ہیں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں