17

حکومت کو عدم اعتماد کے ووٹ کے لیے اپوزیشن کے ساتھیوں کے جلسے کی فکر نہیں، شاہ محمود قریشی

  • ایف ایم کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کو مسلم لیگ (ق) پر اعتماد ہے اور وہ حکومت کے ساتھ کھڑے ہیں۔
  • ان کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن نفسیاتی دباؤ کا شکار ہیں اور ان کے کارکن پارٹی سے مایوس ہو چکے ہیں۔
  • شاہ محمود کا کہنا ہے کہ میں کسی فہرست کو نہیں مانتا کیونکہ عمران خان نے مجھ پر اعتماد ظاہر کیا ہے۔

وزیر خارجہ اور پی ٹی آئی کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے اس بات کی تردید کی کہ حکومت گھبرائی ہوئی ہے کیونکہ اپوزیشن نے اتحادیوں سے ملاقات کرکے وزیر اعظم عمران خان کے خلاف عدم اعتماد کے ووٹ کی حمایت کی۔

پر خطاب کرتے ہوئے جیو نیوز پروگرام آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ حکومت پی ٹی آئی کے اتحاد کے ساتھ اپوزیشن کے کنکلیو سے گھبرائی نہیں، انہوں نے مزید کہا کہ “ہم پہلے ہی جانتے تھے کہ یہ ملاقاتیں ٹیبل ٹاکس سے زیادہ کچھ نہیں ہیں۔”

انہوں نے مزید کہا کہ ‘پی ٹی آئی کو پہلے دن سے ہی مسلم لیگ (ق) پر اعتماد تھا، وہ حکومت کے ساتھ کھڑے ہیں اور ہمارے اتحاد کے ساتھ اپوزیشن کی ملاقاتوں کے حوالے سے میرے بیانات ریکارڈ پر ہیں۔’

مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف کی حکومتی اتحادی جماعت مسلم لیگ (ق) سے ملاقات کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ شہباز شریف کی مسلم لیگ (ق) سے ملاقات نے مسلم لیگ (ن) کے بیانیے کو بری طرح نقصان پہنچایا ہے کیونکہ نواز شریف کی پارٹی نے ضرورت کے مطابق اپنا بیانیہ قربان کردیا ہے۔

شاہ محمود نے مزید کہا کہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) دونوں جماعتیں انتہائی نفسیاتی دباؤ کا شکار ہیں اور ان کے لوگ پارٹی سے مایوس ہو چکے ہیں۔ تاہم، صرف پارٹی کارکنوں کی حوصلہ افزائی اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ فتح قریب ہے، دونوں جماعتیں حکومتی اتحاد سے ملاقاتیں کر رہی ہیں۔

ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ ڈیرہ اسماعیل خان (ڈی آئی کے) فضل الرحمان کا آبائی شہر ہے لیکن ڈی آئی کے کے عوام نے پی ٹی آئی کے امیدوار کو صاف اکثریت سے ووٹ دیا۔ تاہم، پی ٹی آئی کی جیت نے ثابت کر دیا کہ عوام اپوزیشن کے بیانیے کو مسترد کر رہے ہیں، ایف ایم قریشی نے کہا۔

شاہ محمود نے مزید کہا کہ ہمارے اتحادیوں کو وزیر اعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد پر ووٹ میں پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کا انتخاب کرنے سے کچھ حاصل نہیں ہوگا۔

انہوں نے سوال کیا کہ کیا مسلم لیگ ن پنجاب کو مسلم لیگ (ق) کے حوالے کرے گی؟

دس بہترین وزارتوں کے لیے وزیراعظم کی جانب سے تعریفی سند کے جواب میں قریشی نے کہا کہ وزیراعظم نے ہمیشہ کابینہ میں دفتر خارجہ کی کارکردگی کو سراہا ہے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ بھارت کے پاس 1200 سفارت کار ہیں جب کہ پاکستان کے پاس صرف 400 ہیں۔ اس کے باوجود پاکستان کے دفتر خارجہ کی کارکردگی کا ہمیشہ بھارت سے موازنہ کیا جاتا ہے، حتیٰ کہ بنگلہ دیش بھی پاکستان کے مقابلے میں اپنی وزارت خارجہ کے لیے بہت بڑا بجٹ فراہم کر رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس حقیقت کے باوجود وزارت خارجہ کی کارکردگی قابل ستائش ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ‘میں وزارت کی کارکردگی کو جانچنے کے لیے نظرثانی کمیٹی کی فہرست کو اہم نہیں سمجھتا، جو چیز میرے لیے اہم ہے وہ وزیراعظم عمران خان کا مجھ پر اطمینان اور اعتماد ہے کیونکہ وہ میرے لیڈر اور پارٹی چیئرمین ہیں،’ انہوں نے مزید کہا کہ ” عمران خان نے مجھ پر اعتماد ظاہر کیا ہے اور میں مطمئن ہوں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں