17

جمہوریت کا بدلہ ہوگا، سلیکٹڈ حکومت کو ہٹائیں گے، بلاول

بلاول بھٹو زرداری 6 فروری 2022 کو نصیر آباد میں جلسے سے خطاب کر رہے ہیں۔ — ٹویٹر/ پی پی پی میڈیا سیل/
بلاول بھٹو زرداری 6 فروری 2022 کو نصیر آباد میں جلسے سے خطاب کر رہے ہیں۔ — ٹویٹر/ پی پی پی میڈیا سیل/
  • پی پی پی چیئرمین کا کہنا ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان گھبراہٹ شروع کریں کیونکہ پی پی پی ’’میدان جنگ میں داخل ہوگئی ہے‘‘۔
  • انہوں نے کہا کہ پاکستان کے عوام کا وزیراعظم اور پی ٹی آئی حکومت سے اعتماد اٹھ چکا ہے۔
  • پیپلز پارٹی آئینی اور جمہوری طور پر پی ٹی آئی حکومت کو ہٹائے گی۔

نصیر آباد: پی پی پی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اتوار کو پی ٹی آئی کی زیرقیادت حکومت کو ہٹانے کے اپنے عزم کا اعادہ کیا اور کہا کہ ان کی پارٹی 27 فروری کو پی ٹی آئی مخالف لانگ مارچ کا آغاز کراچی سے اسلام آباد تک کرے گی۔

بلاول نے بلوچستان کے ضلع نصیر آباد میں ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ “یہ مارچ اس منتخب حکومت کے خلاف جمہوریت کا انتقام ہو گا۔”

بلاول نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان گھبرانا شروع کریں۔

انہوں نے کہا، “وقت آ گیا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت عوام کے سامنے جوابدہ ہو،” انہوں نے مزید کہا کہ چونکہ لوگوں کا وزیر اعظم پر سے اعتماد ختم ہو چکا ہے، اس لیے پارلیمنٹ کو بھی اس کی پیروی کرنی چاہیے۔

انہوں نے مزید کہا کہ انہوں نے “کٹھ پتلی” کو پیغام بھیجا تھا کہ وہ انہیں آگاہ کریں کہ پی پی پی پی ٹی آئی حکومت کو ہٹانے کے لیے “میدان جنگ میں داخل ہو گئی ہے”۔

“دی کپتان چھین لیا ہے روٹی، کپڑا، اور مکاں عوام سے، بلاول نے کہا، “خان صاحب نے شہریوں سے ان کے معاشی حقوق اور ووٹ کا حق چھین لیا ہے۔ ہم اسے مزید برداشت نہیں کر سکتے، اس لیے ہم نے اس حکومت کے خلاف اعلان جنگ کر دیا ہے۔

پی پی پی چیئرمین کا مزید کہنا تھا کہ ‘ہم اپنے حقوق چھیننا جانتے ہیں لیکن ہم قومی اسمبلی میں حکومت سے انتقام لینے کے لیے جمہوری اور آئینی راستہ اختیار کریں گے۔’

انہوں نے کہا کہ اس ملک کے مسائل کا حل جمہوری جدوجہد ہے اس لیے ہم ہتھیاروں پر نہیں ووٹ کی طاقت پر یقین رکھتے ہیں۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ 1973 کا آئین ریاست اور عوام کے درمیان معاہدہ ہے۔

“جب سے منتخب حکومت اقتدار میں آئی ہے، ملک میں غربت، بے روزگاری اور مہنگائی میں اضافہ ہوا ہے،” انہوں نے کہا کہ انہوں نے پاکستان کے شہریوں سے کہا کہ وہ پی پی پی کو ایک بار پھر حالات درست کرنے کا موقع دیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ اگر تمام صوبوں کو ان کے جائز حقوق مل جائیں اور ان کے وسائل ہوں تو وفاق مزید مضبوط ہو گا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں