8

بلاول اور زرداری سے ملاقات کے بعد شہباز شریف نے مسلم لیگ ن کے سی ای سی کو طلب کر لیا۔

مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف۔  - فائل
مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف۔ – فائل
  • شہباز شریف نے نواز شریف کو بلاول اور زرداری سے ملاقات پر بریفنگ دی۔
  • شہباز نے بھی فضل سے ملاقات کے بارے میں بات کی۔
  • فضل، شہباز بھی پی ڈی ایم کا اجلاس بلانے پر رضامند۔

لاہور: مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کا اجلاس طلب کرلیا۔ دوپہر کا کھانا پیپلز پارٹی کے رہنما بلاول بھٹو زرداری اور آصف علی زرداری کے ساتھ۔

ٹویٹس کی ایک سیریز میں، مسلم لیگ (ن) نے کہا کہ ہفتے کے روز شہباز شریف نے پارٹی کے سپریمو نواز شریف کو ٹیلی فون کیا – جو لندن میں ہیں، پی پی پی رہنماؤں کے ساتھ ان کی بات چیت پر ان سے “مشورہ” کرنے کے لیے۔

مسلم لیگ ن نے کہا کہ نواز سے مشاورت کے بعد شہباز نے پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کا اجلاس 7 فروری (پیر) کو طلب کرنے کا فیصلہ کیا۔

پارٹی نے یہ بھی شیئر کیا کہ شہباز نے پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان سے زرداری اور بلاول سے ملاقاتوں کے بارے میں بات کی۔

مسلم لیگ (ن) نے کہا کہ شہباز شریف نے فضل کو کہا کہ وہ آنے والے دنوں میں ملاقات کے حوالے سے انہیں اعتماد میں لیں گے۔

مزید پڑھ: نواز شریف کے خلاف زرداری کا بیان بدقسمتی ہے، شہباز شریف

بات چیت کے دوران دونوں رہنماؤں نے پی ڈی ایم کی میٹنگ بلانے پر بھی اتفاق کیا۔ مسلم لیگ ن نے کہا کہ پی ڈی ایم کے اجلاس کی تاریخ کا اعلان مشاورت کے بعد کیا جائے گا۔

اس سے قبل گزشتہ روز سابق صدر زرداری اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی رہائش گاہ پر ظہرانہ میں ملاقات کی۔

ملاقات کے بعد پی پی پی اور مسلم لیگ (ن) نے پی ٹی آئی کی زیر قیادت موجودہ حکومت کو برطرف کرنے کے لیے تمام قانونی اور سیاسی آپشنز استعمال کرنے پر اتفاق کیا۔

ملاقات میں مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز اور رہنما حمزہ شہباز شریف بھی موجود ہیں۔

شہباز نے تمام COVID-19 SOPs پر عمل درآمد کو یقینی بناتے ہوئے باپ بیٹے کی جوڑی کو اپنی رہائش گاہ پر خوش آمدید کہا۔

مزید پڑھ: پیپلز پارٹی، مسلم لیگ ن اور دیگر جماعتوں نے اپوزیشن کی مشترکہ، حکومت مخالف حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا۔

واضح رہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف کی ہدایت پر شہباز شریف نے جمعہ کو بلاول کو فون کرکے ظہرانے کی دعوت دی تھی۔

اسپیکر قومی اسمبلی کے خلاف تحریک عدم اعتماد پر اتفاق

پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کے درمیان ہونے والی ملاقات سے باخبر ذرائع نے بتایا کہ دونوں جماعتوں نے قومی اسمبلی کے سپیکر اسد قیصر کے خلاف تحریک عدم اعتماد لانے پر اتفاق کیا ہے۔

تاہم ذرائع نے مزید کہا کہ تحریک پیش کرنے کے وقت پر بعد میں اتفاق کیا جائے گا۔

دوسری جانب ذرائع کا کہنا ہے کہ بلاول اور زرداری لانگ مارچ کی دعوت دینے شہباز شریف کی رہائش گاہ پر گئے تھے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ن لیگ نے دعوت ملنے کے بعد مطالبہ کیا کہ مارچ کے بعد اسلام آباد میں دھرنا دیا جائے۔

لیکن ذرائع کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی نے دھرنے کا خیال مسترد کر دیا۔

ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ ملاقات کے دوران مریم نے زرداری کو اپنے والد نواز شریف سے فون پر بات کرائی۔

ذرائع نے مزید کہا کہ پی پی پی رہنماؤں نے مسلم لیگ (ن) کو پی ٹی آئی کے 20 ناراض ایم این ایز کے نام بتائے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں