17

او آئی سی نے ہندوستانی مسلمانوں پر بڑھتے ہوئے حملوں کی مذمت کی ہے۔

پیر، 2022-02-14 23:04

جدہ: اسلامی تعاون تنظیم کے جنرل سیکرٹریٹ نے ہندوستان کی ریاست اتراکھنڈ کے ہریدوار میں مسلمانوں کی نسل کشی کے حالیہ عوامی مطالبات پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے۔ اس نے سوشل میڈیا پر مسلم خواتین کو ہراساں کرنے کے رپورٹ ہونے والے واقعات کے ساتھ ساتھ کرناٹک میں حجاب پہننے والی خواتین مسلم طالبات پر پابندی کی بھی مذمت کی۔

او آئی سی نے کہا کہ مسلمانوں اور ان کی عبادت گاہوں پر مسلسل حملے، مختلف ریاستوں میں مسلم مخالف قانون سازی کا حالیہ رجحان اور مسلمانوں کے خلاف تشدد کے بڑھتے ہوئے واقعات اسلامو فوبیا کے بڑھتے ہوئے رجحان کی نشاندہی کر رہے ہیں۔

اس نے عالمی برادری بالخصوص اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کونسل کے خصوصی طریقہ کار سے اس سلسلے میں ضروری اقدامات کرنے کا مطالبہ کیا۔

او آئی سی نے ہندوستان پر زور دیا کہ وہ مسلم کمیونٹی کی حفاظت، سلامتی اور فلاح و بہبود کو یقینی بنائے، اپنے شہریوں کے طرز زندگی کی حفاظت کرے اور تشدد کی کارروائیوں کے مرتکب افراد کو انصاف کے کٹہرے میں لائے۔

برقع پوش مسلم خواتین نے پلے کارڈز اٹھا رکھے ہیں جب وہ 11 فروری 2022 کو کولکتہ میں ایک مظاہرے میں حصہ لے رہی ہیں، جب طلباء کو انسٹی ٹیوٹ کے احاطے میں حجاب نہ پہننے کے لیے کہا گیا تھا۔  (اے ایف پی)
13 فروری 2022 کو ممبئی، انڈیا کے مضافات میں ریاست کرناٹک کے چند کالجوں میں حجاب پہنے ہوئے خواتین حالیہ حجاب پر پابندی کے خلاف احتجاج میں شریک ہیں۔ (رئیٹرز)
اہم زمرہ:

حجاب کے تنازع کے بعد بھارتی ریاست میں کچھ اسکول دوبارہ کھل گئے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں